اسرائیلی صدر کا کہنا ہے کہ پاکستانیوں کا وفد موصول ہوا، اسلام آباد نے تردید کر دی۔ دنیا کی خبریں

اسرائیلی صدر کا کہنا ہے کہ پاکستانیوں کا وفد موصول ہوا، اسلام آباد نے تردید کر دی۔ دنیا کی خبریں


دریں اثناء عالمی اقتصادی فورم کے اسرائیلی صدر کے ایک تبصرے نے پاکستان میں ایک سیاسی ریلی کو جنم دیا ہے اب ڈیووس میں اسرائیل کے صدر اسحاق ہرزوگ نے ​​مسلم دنیا کے ساتھ اسرائیل کے تعلقات کے حوالے سے ایک بڑی تبدیلی کی بات کرتے ہوئے کہا ہے کہ حال ہی میں انہیں مراکش سے ایک وفد ملا تھا۔ اور ریاستہائے متحدہ میں مقیم پاکستانیوں میں سے ایک اور غیر ملکی اگرچہ ہرزوگ نے ​​پاکستانیوں کے بارے میں تفصیلات کا ذکر نہیں کیا کہ اس نے ایک اسرائیلی این جی او سے ملاقات کی تھی جس نے مشرق وسطی میں امن کو فروغ دینے کے لئے ایک پاکستانی امریکی وفد کے دورے کا اہتمام کیا تھا جو اب سابق پاکستانی وزیر اعظم عمران خان ہیں۔ عمران خان نے الزام لگایا ہے کہ موجودہ حکومت ملک کی سلامتی کے لیے خطرہ بنی ہوئی ہے، عمران خان نے الزام لگایا ہے کہ ریاستہائے متحدہ نے شبت شریف حکومت کو ریاست اسرائیل کو تسلیم کرنے کا ٹاسک دیا تھا جس سے کشمیر اور بھارت کے حوالے سے اسلام آباد کے اپنے موقف پر سمجھوتہ کیا جائے گا لیکن یہ الزام اسلام آباد میں حکومت کی جانب سے کسی بھی وفد کے آنے کے خیال کو واضح طور پر مسترد کرنے کے بعد آیا ہے۔ پاکستان کی نمائندگی کرتے ہوئے باضابطہ طور پر اسرائیل کا دورہ کیا تھا اور اس بات پر بھی زور دیا تھا کہ مسئلہ فلسطین اور فلسطینی کاز برائے آزادی کے بارے میں اس کا موقف واضح اور غیر مبہم ہے، پاکستان کے فنڈ آفس نے کہا ہے کہ وہ فلسطینیوں کے حق خود ارادیت کی مستقل حمایت کرتا ہے۔ وزیر خارجہ نے بدلے میں عمران خان پر الزام لگایا کہ وہ ملک دشمنوں کا آلہ کار ہیں اور پاکستان کے اندر انتشار پھیلا رہے ہیں، اس لیے اسرائیل کے خلاف پاکستان کے موقف کو سمجھنے کے لیے اس کی کئی سالوں سے جاری خارجہ پالیسی کو سمجھنا ہو گا، اب پاکستان کی صورتحال کے درمیان مماثلت پیدا ہو گئی ہے۔ فلسطینیوں نے کشمیریوں کی صورتحال پر اگر پاکستان نے اچانک ریاست اسرائیل سے دوستی کرنے کا فیصلہ کیا تو وہ بھارت کی مذمت کو جاری نہیں رکھ سکتا تاہم کسی بھی بین الاقوامی فورم پر غیر ضروری ہے حالانکہ 2020 میں امریکہ کی ثالثی میں ابرہام کی ثالثی میں ہونے والے معاہدے کے نتیجے میں تعلقات معمول پر آ گئے تھے۔ اسرائیل کے درمیان متحدہ عرب امارات اور بحرین پاکستان اسرائیل کی ریاست کو تسلیم نہیں کرتا اور نہ ہی اس کے ساتھ کوئی سفارتی تعلقات ہیں اس کے علاوہ اب آپ کے ملک میں دستیاب ہے ایپ ابھی ڈاؤن لوڈ کریں اور چلتے پھرتے تمام خبریں حاصل کریں۔

اسرائیلی صدر کا کہنا ہے کہ پاکستانیوں کا وفد موصول ہوا، اسلام آباد نے تردید کر دی۔ دنیا کی خبریں

اسرائیلی صدر کا کہنا ہے کہ پاکستانیوں کا وفد موصول ہوا، اسلام آباد نے تردید کر دی۔ دنیا کی خبریں



 

Post a Comment

Previous Post Next Post